کینیڈا میں عیسائی شرپسندوں کے مساجد پر مسلسل حملے

 دنیا بھر کی طرح کینیڈا کی کیبنٹ میں بھی مسلمانوں کیخلاف مسلم فوبیا مہم شروع ہوگئی ہے۔ کینیڈا میں گزشتہ ہفتے 2 فوجیوں پر نو مسلم انتہا پسندوں کی جانب سے مبینہ طور پر حملوں کے بعد مسلم اور مقامی طبقات کے درمیان سخت کشیدگی کی کیفیت پیدا ہو گئی ہے جبکہ ایک قصبے میں دائیں بازو کے بعض انتہا پسندوں کے حملے کی اطلاع ملی کہ گزشتہ ہفتے کینیڈا کی پارلیمنٹ کے اندر سارجنٹ ایٹ آرمزکیوین وکرز کو ہلاک کر دیا گیا تھا۔ یہ حملہ آور ارکان پارلیمنٹ کو قتل کرنا چاہتا تھا جبکہ اس کے فوری بعد نیشنل دار میموریل میں کینیڈین فورسز کے ایک فوجی کو ہلاک کر دیا گیا تھا۔ ان واقعات کے بعد کینیڈا میں مساجد کے خلاف احتجاج شروع ہو گیا ہے۔کینیڈا کے ایک شہر کولڈلیک میں علاقے کے بعض افراد نے مسجد پر حملہ کیا اور وہاں پر توڑ پھوڑ کی۔ ان افراد نے مساجد کے باہر اور اندر لکھی ہوئی عبارت مٹا کر اس پر لکھ دیا اپنے ہمسایوں سے محبت کرو۔ ان افراد میں شامل بعض عیسائی شرپسندوں نے مسجد کی کھڑکیاں توڑ دیں اور اس میں لکھی ہوئی عبارت پر سپرے کر دیا۔ انہوں نے دیواروں پر مسلمانوں کے خلاف نعرے تحریر کئے۔ بعض نے یہ عبارت بھی لکھی گو ہوم بعد ازاں مقامی رضا کاروں نے نفرت پر مبنی اس عبارت کو مٹا دیا اور اس کی جگہ لکھ دیا مسلمان اپنے گھر میں ہی ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.